اعلی درجے کی تلاش
کا
6139
ظاہر کرنے کی تاریخ: 2012/03/07
 
سائٹ کے کوڈ fa18811 کوڈ پرائیویسی سٹیٹمنٹ 22457
سوال کا خلاصہ
اگر مسئلہ نہ جاننے کی وجہ سے میت کو حنوط کے بغیر دفن کیا جائے، تو فریضہ کیا ہے؟
سوال
اگر مسئلہ نہ جاننے کی وجہ سے میت کو حنوط کے بغیر دفن کیا جائے، تو فریضہ کیا ہے؟
ایک مختصر

غسل کے بعد میت کو حنوط کرنا واجب ہے، یعنی، پیشانی، دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیوں، دونوں گھٹنوں اور پاوں کے دونوں انگوٹھوں کے سروں پر کافور ملنا[1]۔ لیکن اگر دفن کرنے کے بعد معلوم ہو جائے کہ میت کا حنوط نہیں کیا گیا ہے، تو قبر میں بدن نہ سڑنے اور بدبو نہ پھیلنے کی صورت میں واجب ہے کہ قبر کو کھول کر ، وہیں پر حنوط کیا جائے اور جسد کو قبر سے باہر نکالنا ضروری نہیں ہے، لیکن اگر یہ کام جسد کی ہتک حرمت { یعنی بدبو پھیلنے یا جسد کے سڑنے وغیرہ} کا سبب بنے تو حنوط واجب ہونا ساقط ہوتا ہے[2]۔


[1]. امام خمینى، توضیح المسائل (محشّى)، محقق و مصحح: بنى هاشمى خمینى، سید محمد حسین، ج 1، ص 330، ‌دفتر انتشارات اسلامى، قم، طبع هشتم، 1424ھ.

[2].گلپايگانى، سيد محمد رضا موسوى،مجمع المسائل، ج 1، ص 99، دار القرآن الكريم، قم، 1409  ھ؛ تبريزى، جواد، استفتاءات جديد، ج 2،  ص 46، ، قم؛  لنكرانى، محمد فاضل موحدى‌، جامع المسائل، ج 2، ص 122، انتشارات امير قلم،طبع یازدهم،  قم.

 

دیگر زبانوں میں (ق) ترجمہ
تبصرے
تبصرے کی تعداد 0
براہ مہربانی قیمت درج کریں
مثال کے طور پر : Yourname@YourDomane.ext
براہ مہربانی قیمت درج کریں
براہ مہربانی قیمت درج کریں

زمرہ جات

بے ترتیب سوالات

ڈاؤن لوڈ، اتارنا