اعلی درجے کی تلاش
کا
3639
ظاہر کرنے کی تاریخ: 2011/09/18
 
سائٹ کے کوڈ fa5355 کوڈ پرائیویسی سٹیٹمنٹ 16775
سوال کا خلاصہ
ھٹ دھرم کفار کے ناقابل ھدایت ھونے کے باوجود، انبیاء کی طرف سے ان کی ھدایت پر اصرار کرنے اور قیامت میں ان کے لئے عذاب کے کیا معنی ھوسکتے ھیں؟
سوال
سوره بقره کی آیت نمبر ۶ اور ۷ میں ارشاد ھوتا ھے:" اے رسول! جن لوگوں نے کفر اختیار کیا ھے ان کے لئے سب برابر ھے۔ آپ انھیں ڈرائیں یا نه ڈرائیں یه ایمان لانے والے نھیں ھیں۔ خدا نے ان کے دلوں اور کانوں پر گویا مھر لگادی ھے که نه کچھه سنتے ھیں اور نه سمجھتے ھیں اور آنکھوں پر بھی پردے پڑگئے ھیں۔ ان کے واسطے آخرت میں عذاب عظیم ھے۔" اس آیه شریفه کے مطابق انبیاء {ع} کا مبعوث ھونا ایک بیھوده کام تھا، اب جبکه خداوند متعال نے ان کے فھم و ادراک پر یه مھر لگادی ھے تو معلوم نھیں وه کس جرم کی وجه سے جھنم میں جائیں گے؟
دیگر زبانوں میں (ق) ترجمہ
تبصرے
تبصرے کی تعداد 0
براہ مہربانی قیمت درج کریں
مثال کے طور پر : Yourname@YourDomane.ext
براہ مہربانی قیمت درج کریں
<< مجھے کھینچ کر لائیں.
سیکورٹی کوڈ از صحیح رقم درج کریں

زمرہ جات

بے ترتیب سوالات

ڈاؤن لوڈ، اتارنا